امریکا میں دنیا کے سب سے بڑے ’’کثیرالمنزلہ‘‘ کھیت کا منصوبہ

کھیت کا رقبہ 70 ہزار مربع فٹ ہے ان میں کاشت کیلیے بنائی جانے والی الماریاں 80 فٹ اونچی ہیں

یہ کثیر المنزلہ کھیت ایک پرانی اسٹیل مل کی جگہ تعمیر کیا جارہا ہے اور اس کا رقبہ 70 ہزار مربع فٹ (1.6 ایکڑ) ہے۔ اس میں کاشت کے لیے بنائی جانے والی الماریوں کی اونچائی 80 فٹ ہے 

اور توقع ہے کہ یہاں سے سالانہ 9 لاکھ کلوگرام تک کی زرعی پیداوار حاصل ہوسکے گی؛ جو اسی رقبے کے روایتی کھیت کے مقابلے 75 گنا زیادہ ہوگی

556613-VerticalFarmingx-1468496089-100-640x480

اس سے بھی بڑھ کر وہ نظام ہیں جو اس کثیرالمنزلہ کھیت میں نصب کیے جارہے ہیں۔ مثلاً فصل اُگانے کے لیے دھوپ کے بجائے کم توانائی خرچ کرنے والی ایل ای ڈی روشنیاں، حشرات کش دواؤں سے پاک ماحول، 

پودوں کی جڑوں تک براہِ راست پانی پہنچانے والا آبپاشی کا خصوصی نظام جسے روایتی کھیتوں کے مقابلے میں 95 فیصد تک کم پانی درکار ہوتا ہے، اور ان سب امور پر نظر رکھنے والا ایک خودکار کمپیوٹر نظام وغیرہ

بچت کی غرض سے مختصر جسامت والی، ایسی خوردنی فصلوں کا انتخاب کیا گیا ہے جن کی گردو نواح کے ہوٹلوں اور ریستورانوں میں زیادہ مانگ ہے۔ 

یہ فصلیں ری سائیکل کیے ہوئے پلاسٹک سے تیار کردہ چادروں پر اگائی جاتی ہیں جنہیں بار بار استعمال کیا جاسکتا ہے۔ 

ضروری غذائی اجزا، پانی میں حل کیے جاتے ہیں اور پھوار کی شکل میں فصلوں پر براہِ راست برسادیئے جاتے ہیں۔

قبل ازیں برطانیہ، جرمنی، ہالینڈ اور چند ایک دوسرے یورپی ممالک کے علاوہ امریکا میں بھی کثیرالمنزلہ کھیت بنائے جاچکے ہیں۔

لیکن ایئروفارم کا مذکورہ کثیرالمنزلہ کھیت، اب تک اس نوعیت کا سب سے بڑا تجارتی کھیت ہوگا۔

Vertical-Farming-02-580x275

By arrangement with express.pk

You May Also Like